ملتان میں کھلے عام غیر اخلاقی فلموں کی نمائش

unethical-movie poster-in-pakistan کل سے میرا دماغ غصے سے گھوم رہا ہے کہ اس اسلامک ملک میں بیغیرتی کی ابھی اور کتنی حدیں پار ہونا باقی ہیں...؟؟؟ اسی طرح جسطرح یورپ امریکہ میں سب حرام کاریوں کی تمام حدیں پار ی ہو رہی ہیں اور دن بدن مزید ہو رہی ہیں کل کسی کام سے ملتان کے حسین آگاہی بازار سے گزرنا ہوا تو بجلی کے کھمبے پے ایک غیر اخلاقی فلم کا بینر دیکھا جو کچھ یوں تھا ""فلم کا نام : باپ کی سہیلی, پاکستان میں پہلی بار ایک شاہکار,ڈبل فلم گیت مالا کے ساتھ""

Advertisement
Null

سارے راستے بس دماغ میں غصہ بھرا رہا کہ واہیاتی اور بے غیرتی کی بھی کوئی حد ہوتی ہے اور جب گھر لوٹا تو ایک دوست سے اس بارے بات کی کہ شہری انتظامیہ بھتہ کی صورت میں سنیما گھروں سے ٹیکس تو وصول کر لیتی ہے پر انہیں کسی چیز یا بات کا پابند نہیں کرتی,کہ سر عام بازاروں میں ڈبل فلم کے نام پے معاشرے میں غلاظت دکھائی اور اشتہار کے زریعے پھیلائی جاتی ہے اور کوئی کچھ نہیں کرتا کسی کے کان پے جوں تک نہیں رینگتی۔

آج ان غلیظ لوگوں نے باپ جیسے پاک رشتے کو بدنام کیا کہ " باپ کی سہیلی" تو کل یہ غلیظ لوگ ڈبل فلم کا نام پر " ماں کا یار " بھی رکھ دیں گے پھر کل " بیٹے کی سہیلی اور بیٹی کا یار " جیسے نام رکھ کے اسلامی معاشرہ اور اسلامی خاندانی نظام کی دھجیاں بکھیر دیں گے کہ اسلامی خاندانی نظام میں باپ بیٹی اور ماں بیٹا میں کوئی شرم و حیا نا رہے۔

vulgar film-in-pakistan-2سب مقدس رشتے آپس میں ہی بے شرم ہو جائیں سب کے سب عیبی ہو جائیں اور سب ہلال و حرام کی تمیز کھو بیٹھے ,اور اس جیسے غلیظ ناموں پے مبنی غلیظ فلم دکھانے کے بعد بھی اس بے حس معاشرے کے لوگوں اور انتظامیہ کو زرا برابر کوئی شرم و حیا نہیں آنی.

میں اور آپ اگر ان دو نمبر سینما گھروں کے خلاف ہیں جہاں غیر اخلاقی اور غلیظ ترین فلم جو ڈبل فلم گیت مالا کے ساتھ کے نام پے دکھائی جا رہی ہیں تو اس میسج کو عام کریں زیادہ سے زیادہ شئیر کریں تاکہ پاکستان کے ہر شہری انتظامیہ ان سینما گھروں کے خلاف ایکشن لے اور ان غلاظت کے گھروں کو بند کریں اور آپ سب اس میسج کو سرعام پروگرام کے فیسبک پیج پے Inbox کریں تاکہ سرعام پروگرام کی ٹیم ان غلیظ لوگوں کے خلاف ایک مکمل پروگرام کرے اور انکا سدباب کرے. سرعام ٹیم کا واٹس ایپ نمبر یہ ہے 0321-2229995

یہ میسج غلاظت کے خلاف ہے ناکہ غلاظت کا پھیلانے کا سبب,تو برائے مہربانی تنقید کرنے کی بجائے میسج کو عام کرکے اسکے خلاف آواز سے آواز ملا کے اس غلاظت کا سدباب کرنے میں ساتھ دیں. شکریہ.

تحریر: وقاص

نے27 اپریل 2016کو شایع کیا۔

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *